Search This Website


Tuesday, August 21, 2007

Qurratul Ain Hyder: A Legend passes away

One of the greatest litterateurs of the 20th century, Qurratulain Hyder, who is best known for her novel Aag ka Darya (River of Fire), died at the age of 80.

She was ill for sometime and was admitted at the Kailash Hospital in Noida (Delhi). Ainee's demise has come as a big loss to the world of literature. She was the most towering figure in Urdu fiction and was awarded Padma Bhushan apart from the prestigious Jnanpith and Sahitya Akademi awards.

She was born in Aligarh in 1926 though her hometown was Nehtaur in Bijnor district. Her father Sajjad Hyder Yaldaram and Nazar Zahra, both of them werewell-known writers and influential personalities of their time.

She lived briefly in Pakistan after partition, then moved to England returned to India to settle here. A firm believer in composite culture, Hyder had admitted that partition had come as a jolt to her and she was terribly unsettled as a result. It took her years to come to terms with the reality of two nations. The result was the magnum opus, 'Aag ka Darya' which set new standards in Urdu novel. Some of her famous works are:

Aag Ka Darya

It was the first beerbahuti of the season that Gautam had seen. The prettiest of rain-insects, clothed in god's own red velvet, the beerbahuti was called the Bride of Indra, Lord of the Clouds..... Gautam Nilambar, final year student of the Forest University of Shravasti, had walked all the way from Shravasti to Saket...

That's how the novel begins in the 4th century BC and traces the entire 2500 years of Indian history to finally end in 1956, seven years after the partition of sub-continent. When it was published, the astonishing sense of history, the vast canvas of the novel and Hyder's understanding of the idea of civilisation, had amazed the readers and critics alike.

The characters like Gautam, Hari Kishan, Kamaal, Champa, who appear in various eras under different names (like Abul Mansoor Kamaluddin, Nawab Kamal Reza Bahadur and Kamal Haider), are taken away by the tide of time and then reappear.

Her genius lies in the description of cities like Benares, Lucknow, Bahraich (Shravasti) and when she recollects the past and people in a particular period of time. She is equally at ease writing about Nawabs, Maharajahs and feudals, as she is about folk singers of Bengal, the fakirs, the phaeton pullers, boatmen et al. The ordinary human beings through whom she explores the world.

'In a cool grotto Gautam chances upon Hari Shankar, a princeling yearning to be a Buddhist monk. He falls in love with he beautiful, sharp-witted Champak. And thus begins a magnificent tale that flows through time, through Magadh, Oudh, British Raj, into time of Independence.

The story comes full circle in post-Partition India when Hari Shankar and his friend Gautam Nilambar Dutt meet in the grotto in the forest of Shravasti, and mourn the passing of their lives into meaninglessness, their friends, who have left for Pakistan, and what remains of their country. It is believed that one of the character of the novel Champa Ahmad, who never marries, after Kamaal leaves the country, is none but Qurratul Ayn Haider herself.

What happens between then and now is history, full of clangour of conflict, deviousness of colonisers, apathy of maharajahs and irrelevance of religion in defining the Indianness. (Published in English by Kali for Women, transcreated by author)

Aakhir-e-Shab ke Hamsafar

This is another of her major works. This novel is set in Bengal and runs along side important historic moments and periods like the rise in nationalistic feelings, the growth of revolutionary movements in Bengal, independence of the country along with partition, the demand for Bangladesh and ultimately the creation of the new country.

Mere Bhi Sanamkhane

The novel set in Oudh, depicts the changing order as the fedual system is giving way to a new society. Kunwar Irfan Ali is a staunch believer in traditional values and culture while Rakhshanda doesn't want to cling to the old set of ideas and is keen on adapting to the new culture.


The story starts from the period of first war of independence (mutiny) and continues till the ninth decade of twentieth century. It is especially important as it depicts the social changes in the century, with a woman at the centre-stage and her perspective at the turn of events. When rural folk were suffering, the soldiers were rebelling and there was disillusionment, the elite of Zamindars and rulers of princely states, were making merry at the cost of their suffering subjects, and supporting the British Raj.

Chandni Begam

Again this novel is set in Lucknow. The story of two families. In the Teen Katori House, the family is ultra-modern but at the same time, feudalism flows in their blood. The other family living in Red Rose House is no different. Qambar Miyan is a communist but when it comes to class consciosness, he is no different from a feudal lord. The third family belongs to those working in a 'nautank' (street theatre) company.

Safeena-e-Gham-e-Dil focuses on freedom movement. Her other famous works include 'Dilruba', 'Agle Janam Mohe Bitiya na Kijo' (Don't make me a daughter in the next life), Sita Haran, Chai ke Bagh, are mostly on the social status of women.

Annie's childhood, family & career

Annie was just six when she had written her first story. Another of her story 'Bi Chuhiya' was published in the kids' journal Phool (Lahore). She had spent her initial years in Port Blaire (Andaman and Nicobar islands), later studied at Dehradun, the historic Isabella Thoburn (IT) College at Lucknow and School of Arts London.

There was a strong tradition of learning amongst women in her family that had come from Central Asia. Her ancestor Hasan Tirmizi had settled in Nehtaur in UP. Even her great grandmother Syeda Umm-e-Maryam had translated Quran into Persian. Her father Sajajd Haider Yaldaram was a celebrated writer of his era.

Her mother Nazar Sajjad Haider had published her first novel Akhtarun Nisa when she was just 14 in 1908. Ainee's initial stories were published in Humayun. After partition she lived in Pakistan for sometime where she served as Information Officer for the ministry and later made documentaries.

But following the publication of Aag ka Dariya and the controversies over her outlook regarding the partition of the sub-continent, Hyder returend to India in the early 60s. She joined Imprint as an editor in 1964 and later Illustrated Weekly of India between 1968 and 1975.

In 1967 she got the Sahitya Akademi award for her collection of stories 'Patjhar ki Aawaz'. the same year her mother passed away. In 1969 she got the Sovietland Nehru Award. In 1984 Ainee was honoured with Padma Shree and Ghalib Awards.

The highest literary award of the country Jnanpith was conferred on her in 1990. Until then only Firaq Gorakhpuri had got this award and after her Ali Sardar Jafri received it. Hyder had tranlated (transcreated) Aag ka Darya, (River of Fire) a few years back. (Thanks to Nand Kishor Vikram for chronological records).

See more about Annie at my other site Urdu India.

Raju Bharatan's informative tribute at Rediff is here. They worked together at Illustrated Weekly. The same site has Javed Akhtar's audio tribute. Sometime back Raza Rumi wrote the post 'Conversations with renowned author Qurratulain Haider' at IndianMuslims.in here.
Reyazul Haq has also posted his tribute at his blog Hashiya.


Raza Rumi said...

Adnan Mian
This is a great post - thanks for highlighting the important works of this great writer.

Ek ehad khatam aur tareekh ka ik aham baab band ho gaya hai..

The consolation is that Ainee Apa will live in the hearts and minds of those who appreciate literature and care for our valuable heritage.

I will return with more comments on her works later - as I am too overwhelmed by this event!

shahidul islam said...

عینی آپا
ایک عہدکاخاتمہ
اردوکی شہرہ آفاق ادیبہ قرة العین حیدرکوشاہدالاسلام کاخراج عقیدت

برصغیرمیںاردو ادب کی معتبر ، محترم اوربلندقامت شخصیت قرة العین حیدر کی زندگی کا ستارہ غروب ہو گیا لیکن ان کی عظمت و آفاقیت بیک وقت کئی ایسے سوالات چھوڑ گئی جو برسہابرس تک زیر بحث رہیںگے۔ در اصل قرة العین حیدر کی شخصیت اردو ادب کے محدود کینوس تک ہی سمٹی ہوئی نہیں تھی بلکہ عالمی ادب پر بھی ان کی تخلیقی صلاحیتوں کا اچھا خاصا اثر و رسوخ دیکھنے کو ملتارہا۔ باوجوداس کے محترمہ قرة العین حیدر جیسی عظیم شخصیت کو نوبل انعام کا مستحق نہیں ٹھہرایا جا سکا تو اس میں حیدر کی اپنی ذات کا کوئی عمل دخل نہیں ہے بلکہ سچی بات یہ ہے کہ وہ اردو کے ساتھ روا رکھے جانے والے اس عالمی سلوک کا شاخسانہ ہے جس کی وجہ سے ہنوز عالمی ادب کے لئے اردو کو نوبل انعام کا مستحق نہیں گردانا گیا ۔ ورنہ سچی بات یہی ہے کہ قرة العین حیدر کی فکری بلند پروازی ، تخلیقی آفاقیت اور موضوع کے ارتسالی اختصاص کی بنا پر وہ ادب کے نوبل انعام کی مستحق تھیں لیکن انہیں عمداً ا س اعزاز سے دور رکھا گیا۔ زائد از دو سو کہانیوں کی خالق قرة العین حیدر اس شہرہ آفاق شخصیت کا نام ہے جس نے ار دو کے ادبی سرمایہ کو موضوع ، ہیئت اور تجربات کے نوبہ نو مراحل سے گزارتے ہوئے صحیح معنوں میں تنوع بخشا اور نتیجے کے طور پر عالمی سطح پر اردو فکشن دنیاکو منھ دکھانے کے قابل ہوا۔ ورنہ یہ حقیقت اظہر من الشمس ہے کہ فکری اعتبار سے اردو کا واد· ادب سنگلاخ ہی نہیں تھا بلکہ حقیقی معنوں میں یہ سر زمین کچھ زیادہ ہی بنجر واقع ہوئی تھی لیکن قرة العین حیدر کے پیش ر و نے اول اول اردو ادب کو فکری اعتبار سے مالا مال کیا اور ترقی پسند تحریک در اصل اس سلسلے کی ابتدائی کڑی قرار پائی جس کے سالاروں میں پریم چند ، سجادظہیر ، احمد ندیم قاسمی ، غلام عباس ، سعادت حسن منٹو، عصمت چغتائی ، شوکت صدیقی ، مجروح سلطان پوری اور قرة العین حیدر کے والد بزرگوار سجاد حیدر یلدرم وغیرہ شامل تھے۔ حالانکہ یلدرم کے ساتھ اردو کے نقادوں نے بہت زیادہ انصاف سے کام نہیں لیا اور ان کی شخصیت کو کسی نہ کسی اعتبار سے ترجمہ نگار بنا کر پیش کرنے کی کوشش کی گئی لیکن عالمی ادب کے مزاج و میلان کو اردو میں پروسنے کا کام شاید پہلی بار سجاد حیدر یلدرم نے ہی کیا تھا۔ کیونکہ وہ ترکی ادب پر نہ صرف عبور کامل رکھتے تھے بلکہ اس کے نشیب و فراز سے بھی وہ بخوبی واقف تھے ۔ چنانچہ انہوں نے ترکی ادب کو اردو میں متعارف کرانے کے ارادے سے ابتدائی دور میں بعض اہم کہانیوں کے ترجمے کئے لیکن بعد کو انہوں نے جو تحریریں سپرد قلم کیں وہ در حقیقت براہ راست اردو کو ایک نئی فکر سے متعارف کرانے کا ذریعہ بنیں۔
قرة العین حیدر نے فکری اعتبار سے اپنے والد بزرگوار کی طرز روش کی ہی تجدید کی اور یقینا یہ کہنا مبالغہ نہ ہوگا کہ انہوں نے اردو فکشن کو جدت کے ایسے شعور سے آشنا کرایا جو در حقیقت مکمل طور پر اردواد ب کے لئے انوکھا اور نرالا تھا ۔ شعور کی رو کی تکنیک کا استعمال کرتے ہوئے انہوں نے اپنے شہرہ آفاق ناول ”آگ کا دریا “میں جس طرح طویل عہد کو سمیٹنے کی کامیاب کوشش کی اس کا کوئی ثانی یا بدل ہنوز اردو ادب کے پاس موجود نہیں ہے۔ 20جنوری 1926کو علی گڑھ میں پیدا ہو نے والی قرة العین حیدر نے پہلی بار 11سال کے عمر میں ادب کی وادی میں قدم رکھا ۔نوخیز اور نابالغہ قرة العین حیدر شروع سے ہی ادب کو بڑے کینوس میں دیکھنے کی خواہاں رہیں اور ان کی نگارشات اسی حقیقت کی ترجمانی بھی کرتی ہیں۔ تہذیب و ثقافت سے گہرے روابط کی جھلک ان کے یہاں دیکھنے کو ملتی ہے۔ محض 19سال کی عمر میں ان کا پہلا ناول ”میرے بھی صنم خانے“ منصہ شہود پر آیا۔
اردو فکشن کو ”آگ کا دریا ،آخر شپ کے مسافر ، چاندنی بیگم “ اور” کار جہاں درازہے“ جیسے ناول دینے والی قرة العین حیدر کا المیہ یہ ہے کہ قیام پاکستان کے بعد جب ان کا کنبہ ہجرت کر کے پاکستان گیا تو انہیں پاکستان میں صرف اس وجہ سے اچھی نگاہ سے نہیں دیکھا گیا کیونکہ انہوں نے شعور کی رو تکنیک کا استعمال کرتے ہوئے اپنے شہرہ آفاق ناول ”آگ کا دریا“ میںعہد قدیم اور عہد وسطیٰ کی تصویر کشی کے دوران جس فکر کی ترجمانی کی تھی وہ قیام پاکستان کی فکر سے کہیں نہ کہیں متصادم دکھائی دے رہی تھی ۔ نتیجہ یہ ہوا کہ پاکستان میں قرة العین حیدر کی بلند قامت شخصیت معتوب بنائی جانے لگ گئی اور محترمہ نے آخر کار مملکت خداداد کو الوداع کہنے کا فیصلہ کر لیا اور وہ برطانیہ چلی گئیں۔ اسے ہندوستان کی خوش قسمتی کہا جائے کہ تقسیم ہند کے بعد پاکستان ہوتے ہوئے برطانیہ میں سکونت پذیر ہو جانے والی عینی آپا نے بعد کو وطن لوٹنے کا فیصلہ لے لیا اور اس طرح وہ ایک بار پھر اپنے گھر واپس آئیں۔
حالانکہ قرة العین حیدر نے دو سو سے زائد کہانیاں لکھیں اور تقریباً بارہ ناول تخلیق کئے لیکن ان میں سے چند ناولوں کو جو بے نظیر شہرت ملی وہ اردو ادب میں شاید ہی کسی دوسرے کے حصہ میں آئی ہو ۔ ”آگ کا دریا “ایسا ہی ناول ہے جو طویل عہد کو چند سو صفحات میں پےش کرنے کی ایک نئی کوشش قرار پاتی ہے۔ ”آگ کا دریا“ میں انہوں نے صدیوں کا سفر جس کامیابی کے ساتھ طے کیا ہے اس کی توصیف و تعریف میں ناقدین کی پوری جماعت یونہی رطب اللسان نہیں ہے بلکہ یہ ناول درحقیقت تنقید نگاروں کو اس بات کے لئے مجبور کرتاہے کہ وہ سچائی کا کھلے دل سے اعتراف کریں۔ عینی آپا کو خاندانی تخلیق کار ہو نے کا بھی شرف حاصل ہے ۔ کیونکہ جہاں ان کے والد بزرگوار سجاد حیدر یلدرم متحدہ ہندوستان کے چنندہ تخلیق کاروں میں شمار ہوتے تھے وہیں ان کی والدہ مرحومہ نظر سجاد حیدر بھی معروف ناول نگار تھیں۔ قرة العین حیدر اردو ادب کی ”ورجیناوولف“ یونہی قرار نہیں دی گئیں بلکہ اس میں ان کی بہترین تربیت و تعلیم کا بھی خاصاکردارنمایاں ہے۔ ’آگ کا دریا ‘ کی خالق کو عالمی ادب کے ہم عصر وںملین کنڈیرا اور گیبریل گرسیا مرکاو¿س جیسی شخصیات کے زمرے میں رکھے جانے کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ انہوں نے اردو فکشن کو نئی صحت مند قدروں سے آشنا ہی نہیں کرایا بلکہ نت نئے تجربات سے گزرتے ہوئے واد· ادب کو جدت طرازی سے سیراب کرایا۔
فکشن کے کامیاب سفر کے دوران انہوں نے ’گردش رنگ چمن ‘ اور ’چائے کے باغ ‘ وغیرہ تصانیف کے ذریعہ تجرباتی عمل کو نئی منزلوں سے آشنا کرایا ۔ یہی وجہ رہی کہ ملک کے تمام بڑے اعزازات کا انہیں مستحق قرار دیا گیا ۔جن میں گیان پیٹھ ایوارڈ، ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ ، اقبال سمان، سویت لینڈ نہرو ایوارڈ، غالب ایوارڈ ، پدم شری اور پدم بھوشن ایوارڈ شامل ہےں۔
محض اردوادب کی چہار دیواری تک محدود نہ رہنے والی قرة العین حیدر کو دنیا بھر میں قدر و منزلت کے نگاہ سے دیکھا گیا اور گیسٹ لکچرر بنا کر ان کی لیاقت و وجاہت کا اعتراف کیا گیا ۔ یہی وجہ رہی کہ کیلی فورنیا یونیورسٹی ، شکاگو،وزکونسن اور ایری زونا جیسے تعلیمی اداروں میں انہوں نے تشنگان ادب کی پیاس بجھائی ۔ محترمہ جامعہ ملیہ اسلامیہ میں خان عبدالغفار خان چیئرکے لئے مامور کی گئی تھیں جہاں انہوں نے بحیثیت پرو فیسر اپنی تدریسی خدمات سے پوری ایک نسل کو سیراب کیا۔ صحافت کے درک سے بھی مرحومہ متصف تھیں اور ملک کے موقر صحافتی ادارہ سے عملی انسلاک اس بات کو ظاہر کرتاہے کہ واد· صحافت میں تیرنے کا انہیں بھر پور تجربہ تھا ۔ السٹریٹیڈویکلی،امپرنٹ ممبئی جیسے انگریزی کے اخبارات و جرائد سے گہری وابستگی رہی ۔ گویا قرة العین حیدر کی شخصیت کو پہلو دار قرار نہ دینے کی بظاہر کوئی گنجائش نہیں ہے۔ کہا جاسکتا ہے کہ اردو فکشن کو نئی منزل تک لے جانے کا ان کا سفر تو کامیاب رہا ہی ساتھ ہی ساتھ صحافت کو بھی نئے شعور سے روشنا س کرانے میں انہوں نے کوئی کمی باقی نہیں چھوڑی۔ اردو کی ایسی شہرہ آفاق شخصیت کو جو بیک وقت مشہور ناول نگار ہو ، معروف افسانہ نگار ہو ، مقتدر صحافی ہو اور روشن خیال مفکر و دانشور ہو اور اپنی قلمی صلاحیت و لیاقت سے عالمی ادب و صحافت پر اپنا گہرا نقش چھوڑ رہا ہو، اسے بھی اگر عالمی ادب کا نوبل انعام نہ دیا جائے تو اس سے بڑی تعصب نظری اور کیا ہوسکتی ہے؟
عینی آپا کسی اعزاز کی متمنی نہیں تھیں، ان کا فن اس بات کا متقاضی تھا کہ عالمی ادب کا نوبل انعام انہیں دیا جاتا۔ ایسا بھی نہیں ہے کہ اگر انہیں اس کا مستحق قرار دینے سے گریز کیا گیا تو اس سے قرة العین حیدر کی آفاقی شخصیت پر کوئی حرف آئے گا یا ان کی قدرو منزلت میں کوئی کمی محسوس کی جائے گی۔ نوبل امن انعام کے لئے گاندھی جی کو بھی تو نظر انداز ہی کیا گیا تھا۔ تو کیا گاندھی کی عظمت پر کوئی حرف آ گیا ؟ اسی طرح اگر قرة العین حیدر کو فکشن کی گوناگوں خدمات کے لئے اگر نوبل انعام نہیں دیا گیاتواس سے ان کی خلاقانہ صلاحیتوں پر کہیں سے بھی کوئی حرف آنے کو نہیں ہے۔ یقینی طور پر آنے والے دنوں میں ادارہ نوبل کو اپنی اس تعصب نظری یا کوتاہ نظری پر افسوس ضرور ہوگا۔ ہمیں افسوس صرف اس پر ہے کہ عینی آپا نے اردو ادب کی کوکھ سے کیوں جنم لیا ؟اگر کسی اور کوکھ سے جنم لے کر اردو میں وارد ہوتیں تو ظاہر ہے نوبل انعام انہیں کب کا مل چکاہوتا ۔

indscribe said...

I agree, Raza bhai.

Shahid Sahab, thanks a lot for posting the tribute.

Siyaah said...

Thanks for the very informative write-up...a pity that such authors have not got the international acclaim they deserve...

Anonymous said...

لقد أحببت ما قرأت بالموضوع ، سؤال صغير ، أي العناصر حسب رأيك التي تحفّز بالأخص تحرك زوج الدولار اليورو؟